اسلام آباد:  وفاقی حکومت کی جانب سے معاشی ترقی کے دعوے کیے جاتے رہے ہیں تاہم معیشت کے اہم حصے یعنی رواں جاری کھاتے کے حوالے سے حکومت اور مرکزی بینک کی جانب سے پیش کیے گئے اعداد و شمار میں واضح فرق نظر آتا ہے۔وفاقی حکومت کو امید ہے کہ رواں مالی سال کے دوران کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 13 ارب ڈالر رہے گا جبکہ مرکزی بینک کے مطابق یہ خسارہ 8 ارب ڈالر تک آجائے گا۔ اس سلسلے میں وزیر معاشیات شوکت ترین کی سربراہی میں ایک اجلاس جمعے کے روز اسلام آبا دمیں ہوا۔ اجلاس میں حکومت کے تین سال کے دوران بیرون ملک سے پاکستان آنے والا سرمایہ اور پاکستان سے بیرون ملک بھیجے جانے والے سرمائے کا جائزہ لیا گیا۔